Listen in Urdu:


Downloads:


How did this story make you feel?

Please choose one

This is how other readers felt

Plus 13663 others

Share this story:

Internet safety:

www.thinkuknow.co.uk


Share your work

The Boy Who Cried Wolf

The Boy Who Cried Wolf
Find out more
about the contributors

The Boy Who Cried Wolf

An Urdu Story by Kausar Ali


Once upon a time, there was a shepherd boy named Asif who lived in a village in one of the many beautiful valleys in Northern Pakistan. Asif’s village was located at the foothills of Pakistan’s famous mountain range known as Kurra Kurram. These mountains are very high and very bare with no vegetation whatsoever. But it is a very different scene in the valleys. There are fast-flowing rivers, like the Swat River, which runs from the snow-covered mountains to create beautiful waterfalls and lakes below. There is lush green grass; and in the springtime the ground is covered in brightly coloured flowers and hundreds upon hundreds of butterflies take to the air creating a truly heavenly place.

There was another village further up the valley where Asif’s cousin lived. Looking down from that village, the trees and houses below appeared like little toys. Asif always enjoyed this scene whenever he visited his cousin, Hamza, and would often look for his own house in the village far below. The young boy marvelled at how small and distant it all seemed.

Asif’s father, Ahmed, owned a small herd of goats which he would take out of the village for grazing early each morning. Asif often liked to accompany his father on these trips as there was no school in the small village. Asif’s mother always made them a lunch of meat curry, chapattis and parathas, and a lovely milk drink called lussie. She would wrap the lunch in a square of cloth and Asif would carry it with him to keep it safe until it was time to eat.

Asif was a very active boy and would run around after the goats and keep them in check. His father was very pleased and thought that such training would make Asif a very good shepherd when the boy was older.

At midday, Asif and his father would spread out a roll of cloth beneath the shade of a tree and sit down for their lunch. The young boy always enjoyed his paratha and his lussie drink. When eating, both father and son would keep a watchful eye on the goats to make sure that none wondered away from the herd.

They would always return home before sunset as there was no electricity in the village and they needed to eat their dinner before the night set in. Asif went to bed soon after his dinner because there was little to do in the dark, and also because he had to wake very early each morning to milk the goats before taking them out to graze.

Asif enjoyed the lambing season when the goats and sheep gave birth to their kids and lambs. The young boy loved the little lambs and carried them around under his arm, imitating their tiny bleating sounds... ‘Maa..maa..maa..maa.’

Hamza would often visit from the hills above, then both boys would carry the lambs around and feed them soft food from their palms and cuddle up close to them to stay warm whenever the weather turned cold.

When Asif was older his father gave him the responsibility of looking after the herd. Hamza often joined Asif and the two boys would get up early to milk the goats and then take the herd out of the village for grazing. This became a routine for both boys and the days and nights passed slowly.

Until, one dark night, a wolf attacked the chickens and goats belonging to a farmer who lived close by. This caused much concern in the village and so it was decided that two men would be posted on guard to kill the wolf if it attacked again.

The wolf did attack again, but this time the men shot and killed the beast and the village soon returned to its peaceful state once more.

Sometime later, when the two boys were sitting on a rock in the meadow watching the goats munching away at the fresh grass, Hamza said to Asif, ‘The goats are grazing happily but we are always so bored. It is not fair.’

Asif thought about this for a moment then replied, ‘We should do something exciting then. What shall we do?’

Naughty Hamza grinned from ear to ear. ‘We should make fools of the people of the village,’ he said at last.

‘How do we do that?’ asked Asif.

Hamza went on to remind Asif about the night the wolf attacked the chickens and goats and how the men had been posted to guard the village with guns. ‘Then the wolf did attack and the men killed it! That was very exciting!’ exclaimed Hamza. ‘But then everything became peaceful and boring again.’

Asif remembered because it was the only exciting thing that had happened in the village for a very long time.

‘You know what I am thinking,’ continued Hamza. ‘If we shout and scream and say, “The wolf is attacking again! Help! Help!” then we would see how the people in the village would run to save us.’The Boy Who Cried Wolf

‘But it is very bad to tell lies,’ said Asif, who was not at all sure about his cousin’s naughty plan.

‘It is just a joke,’ insisted Hamza. ‘Don’t you want to see their worried faces as they run to help us? It will be so funny.’

‘And when they discover that there is no wolf and they see us laughing at them, they will be very annoyed with us,’ said Asif. But even as he said this, Asif had to admit that it would indeed be very funny to see the looks on the villagers’ faces as they ran into the meadow. He also had to admit that it was very boring watching the goats chew on the grass all day. ‘Okay,’ he said at last, ‘how do we do it?’

Hamza explained his plan and the two boys found themselves laughing and rubbing their hands with glee at the thought of making fun of the unsuspecting villagers.

The next morning, after milking the goats, the two boys led the herd into the meadow to graze. After enjoying their tasty lunch, packed nicely for them by Asif’s mother, they decided to carry out their naughty plan. 

Hamza hid himself behind a bush while Asif ran down to the village shouting at the top of his voice, ‘Help us! Help us! The wolf is attacking Hamza! Please help us!’

As soon as the villagers heard Asif’s cries for help, they picked up their sticks and axes and ran towards the meadow. ‘Where is the wolf?’ asked one man. ‘How did he attack Hamza?’ asked another. ‘Did the wolf drag him away like he did with my goats and chickens? Tell us, where is Hamza?’

The villagers were very worried as they searched all about for the injured boy.

It was then that Hamza jumped out from his hiding place. ‘Welcome. Thank you for coming,’ said the cheeky boy with a big grin upon his face, ‘but there is no wolf here. He ran away when I told him that the villagers were coming to kill him.’ Then Hamza fell to his knees and burst out laughing. When Asif saw the looks of concern and panic on the villagers’ faces he too burst out laughing and began rolling about in the grass.

The villagers were very angry with the boys, and as they walked away from the meadow they promised to tell Asif’s father about his son’s wicked behaviour.

When Ahmed discovered what his son had done he was very disappointed indeed. He dragged the two boys before the crowd of villagers and made them both apologise for their sneaky trick and promise never to do such a thing again.

A few months passed and life returned to normal. But one day, as Hamza and Asif were tending to the goats in the meadow, a fierce wolf came around the hill and tried to drag one of the goats away. Hamza jumped to his feet and ran after the wolf to scare it away. But the fierce wolf simply dropped the goat and got a hold of Hamza’s leg instead.

Asif was terrified at the sight of his friend being dragged away by the wolf and quickly ran towards the village screaming, ‘People of the village, please come quickly! The wolf is dragging Hamza away! Please help us!’

One of the villagers said, ‘We are not going to be fooled again! Go back to your goats.’

‘Please!’ cried Asif. ‘I am telling the truth. Come and help Hamza before it is too late!’

A kindly villager decided to take a look at the edge of the meadow and there he saw Hamza with his leg trapped in the wolf’s powerful jaws. ‘Asif is telling the truth!’ he cried. ‘Come help at once!’

The villagers grabbed their sticks and axes and ran to help poor Hamza. And when the wolf saw the crowd running towards him, he let go of the boy’s leg and disappeared into the forest.

Two men picked Hamza up by his shoulders and they all returned to the village. The boy’s leg was very badly injured and he was in a great deal of pain. Asif was close to tears and asked the villagers, ‘Why did you not come sooner? Why did you not believe me?’

A woman stepped forward. ‘You lied to us once before,’ she explained. ‘This is why we did not believe you. Do you see now why it is wrong to tell lies? You must never behave in such a way for it causes mistrust.’

Asif looked at his injured cousin, and at the villagers who had saved the boy from the wolf, and he knew then that he would never tell a single lie ever again.

The Boy Who Cried Wolf
Find out more
about the contributors

The Boy Who Cried Wolf

An Urdu Story by Kausar Ali


وہ لڑکا جس نے     بچاؤ بھیڑیا  آیا    کا شور مچایا

ایک اردو کی کہانی (پاکستانی)

کوثر علی کی زبانی

The Boy Who Cried Wolf

An Urdu Story (Origin: Pakistan)

By Kausar Ali

 

ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ایک چرواہا لڑکا جس کا نام آصف تھا، پاکستان کے شمالی علاقوں کی خوبصورت وادیوں میں سے ایک میں واقع گاؤں میں رہتا تھا۔ آصف کا گاؤں در اصل  پاکستان کےمشہور پہاڑی سلسلہ کے دامن میں  واقع تھا جسے’ کوہ قرا قرم‘ کہتے ہیں۔یہ پہاڑ بہت ہی اونچے ہیں اور ان پر زیادہ سبزہ بھی نہیں ،لیکن وادیوں میں منظر اس سے مختلف ہے جہاں تیز   رو   دریا بہتے ہیں جیسا کہ دریائے سوات جو کہ برف سے لدے ہوئے پہاڑوں سے نیچے کی طرف بہتے ہوئے نہایت خوبصورت آبشار یں اور جھیلیں بناتا ہوا گزرتا ہے۔ وہاں پر سرسبز  گھاس ہے، اور موسمِ بہار میں تمام زمین خوبصورت رنگوں کے پھولوں سے بھر جاتی ہے، اور سینکڑوں ہزاروں شوخ رنگوں کی تتلیاں ہوا میں اڑتے ہوئے دکھائی دیتی ہیں جو کہ اس علاقے کو جنت نشاں  بنا دیتی ہیں ۔

وہاں سے تھوڑی سی بلندی پر ایک اور گاؤں تھا جہاں پرآصف کے ماموں رہتے تھے ان کا ایک بیٹا آصف کا ہم عمر تھا جس کا نام ہمزہ تھا۔ہمزہ کے گاؤں سے نیچے کی طرف دیکھنے پر درخت اور گھر  چھوٹے  چھوٹے کھلونوں کی طرح نظر آ تے  تھے ۔ آصف جب بھی حمزہ سے ملنے جاتا وہ اس نظارے کو دیکھ کر بہت محظوظ ہوتا  ، اور  اکثر وہاں سے اپنے گھر کو دیکھنے کی کوشش کرتا جو کہ کافی نیچے  والی وادی کے گاؤں میں تھا۔ نوجوان لڑکا اس بات پر بہت متعجبّ ہوتا کہ چیزیں  نیچے وادی میں کتنی چھوٹی اور کتنی دور نظر آتی تھیں۔

آصف کےوالد  احمد کےپاس بکریوں کا ایک چھوٹا سا گلہّ تھا جنہیں وہ روزانہ صبح سویرے  چرانے   کے لئے گاؤں سے باہر  لے جاتے تھے۔آصف  کے چھوٹے سے گاؤں میں  کوئی سکول نہ تھا اس لئےاکثر  وہ اپنے والد کے ساتھ باہر  چلا   جاتا تھا۔آصف کی والدہ ہمیشہ ان دونوں کے دوپہر کے کھانے کے لئے گوشت کا سالن، چپاتیاں، اور پراٹھے  بنا دیتیں ، اور ساتھ میں بہت سی مزیدار لسیّ پینے کے لئے  دے دیتیں۔ اور وہ یہ سب سامان ایک بڑے سے چوکور مظبوط کپڑے میں گٹھڑی کی طرح باندھ دیتیں جسےآصف اپنے ساتھ حفاظت سے لے کر چلتا،اور جبتک کہ کھانے کا وقت نہ ہو جاتا اس کی دیکھ بھال کرتا۔

آصف بہت چست لڑکا تھا ، وہ تمام دن بکریوں کے پیچھے بھاگتا پھرتا اور ان کی خوب جانچ پڑتال کرتا  رہتا۔ اس کا باپ بہت خوش تھا کہ جب وہ بڑا ہو  جائےگا تو یہ تربیت آصف کو  ایک بہت اچھا چرواہا  بنا دے گی۔

دوپہر کے وقت آصف  اور اس کے والد کسی درخت کی چھاؤں تلے ایک دستر خواں بچھا دیتے اور اس پر کھانے کا سامان لگا کر کھانا  کھانے بیٹھ جاتے۔ نوجوان لڑکا ہمیشہ اپنا  پراٹھا مزے لے کر کھاتا اور  شوق سے لسیّ  پیتا۔کھانا کھاتے وقت دونوں باپ بیٹا بکریوں پر بھی نظر رکھتے تا کہ ان میں سے کوئی  اپنے گلےّ سے باہر نکل کر کہیں دور نہ چلی جائے۔

وہ دونوں ہمیشہ بکریوں کے ساتھ سورج غروب ہونے سے پہلے گھر آ جاتے کیوں کہ  گاؤں میں بجلی نہیں تھی اور   رات ہوجانےسے پہلے  انہیں رات کا کھانا بھی کھانا   ہوتا تھا۔ آصف کھانے کے بعد جلد ہی سو جاتا تھا کیوں کہ اندھیرے میں وہ کچھ اور کر بھی نہیں سکتا تھا۔ اس کے علاوہ اسے صبح سویرے اٹھ کر بکریوں کو باہر لے جانے سے پہلے ان کا دودھ بھی دوہنا   پڑتا تھا۔

آصف اس موسم میں بہت  خوش ہوتا جب کہ بکریاں اور بھیڑ  یں  بچےّ دیتیں ۔نوجوان لڑکا  بکریوں اور بھیڑوں کے میمنوں کو بہت چاہتا تھا، اور سارا  دن  ان کو اپنی بغل میں دبائے بھاگا پھرتا  اور ساتھ ہی ان کی آوازوں کی نقل کرتا رہتا   ’ مے، مے، مے،مے،مے ‘  ۔

ان دنوں حمزہ بھی  اکثر   اونچے  پہاڑی علاقے سےآصف کو ملنے آ جاتا، پھر کیا تھا  ! اب دونوں لڑکے  بکریوں کے میمنوں کو لئے پھرتے، اپنے ہاتھ کی ہتھیلی پر   کھانا  رکھ کر انہیں  کھلاتے اور جب  بھی موسم  بہت ٹھنڈا ہو جاتا  تو  وہ خود کو گرم رکھنے کے لئے بھی ان میمنوں کو اپنے قریب دبائے رکھتے۔

جب آصف کچھ اور بڑا ہوا تو اس کے والد نے اسے بکریوں کے گلےّ کی دیکھ بھال کی پوری ذمہ داری سونپ دی۔ حمزہ بھی اکثر آصف کے ساتھ مل جاتا،اور دونوں لڑکے صبح سویرے  بکریوں کا دودھ دوہنے کے لئے اٹھ جاتے  اور پھر اس گلےّ کو گاؤں سے باہر چرنے کے لئے لے جاتے۔ یہ دونوں کے لئے ایک طرح کا معمول بن گیا تھا، اور  آہستہ آہستہ اسی طرح دن رات گزرتے گئے۔

پھر ایک اندھیری  رات میں ایک بھیڑیے نے ایک اور کسان جو کہ قریب ہی رہتا تھا اس کی  بکریوں اور مرغیوں پر حملہ کر دیا۔ اس وجہ سے گاؤں میں دہشت پھیل گئی۔ سب کی رائے سے فیصلہ کیا گیا کہ روزانہ رات کے وقت گاؤں کے دو آدمی نگہبانی کے لئے مقررّ کیے جائیں جو کہ بھیڑیے کو مار دیں اگر اس نے پھر حملہ کیا۔ پھر بھیڑیے نے واقعی دوبارہ حملہ کیا، مگر اس دفعہ  ان نگہبان آدمیوں نے اس وحشی پر گولی چلا  کر اسے مار دیا۔ اور  پھر گاؤں میں جلد ہی دوبارہ سکون اور آسودگی کا ماحول  واپس آ     گیا۔

کچھ عرصہ گذر  گیا، پھر ایک دن دونوں لڑکے چراگاہ میں ایک چٹان پر بیٹھے بکریوں کی نگہبانی کر رہے تھے جو کہ تازہ گھاس چبا رہی تھیں۔حمزہ نے آصف سے کہا،   ’ بکریاں تومزےسے گھاس چر رہی ہیں مگر ہم ہمیشہ بور ہوتے رہتے ہیں، یہ انصاف نہیں ہے‘.  آصف نے تھوڑی دیر  غور کیا پھر جواب دیا ،     ’پھر ہمیں کوئی ہوشیاری اور دلچسپی کا کام کرنا چاہیے۔ سوچو ہم کیا کریں ‘؟ 

شیطان حمزہ نے ایک کان سے دوسرے کان تک دانت دکھاتے ہوئے اورمنہ بناتے ہوئےکہا،   ’ہمیں گاؤں کے لوگوں کو بیوقوف بنانے کے لئے کچھ کرنا چاہیئے‘۔

’ ہم یہ  کیسے کریں گے ؟‘    آصف نے پوچھا

حمزہ نے آصف کو اس رات کے بارے میں یاد دلایا ، کہ کس طرح بھیڑیے نے مرغیوں اور بکریوں پر حملہ کیا تھا اور کس طرح دو نگہبان  مردوں کو ذمہ داری دی گئی تھی کہ وہ گاؤں کی بندوقوں سے حفاظت کریں۔ ’ بھیڑیے نے پھر حملہ کیا تو ان مردوں نے اسے مار دیا !  حمزہ نے بڑے جوش سے کہا ،    اور پھر ہر  چیز   دوبارہ  پر سکون اور بور کرنے والی ہو گئی‘۔

آصف کو یاد آیا کہ واقعی وہی ایک  بات بہت دلچسپ تھی جو کہ گاؤں میں ایک عرصے کے بعد ہوئی تھیThe Boy Who Cried Wolf۔

’   تمہیں معلوم ہے کہ میں کیا سوچ رہا ہوں؟‘  حمزہ نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا۔’ اگر ہم خوب چیخیں ، چلاّئیں اور کہیں  بھیڑیا پھر حملہ کر رہا ہے،  بچاؤ  !   بچاؤ   !   تب ہم دیکھیں گے کہ کس طرح گاؤں کے لوگ ہمیں بچانے کے لئے بھاگے ہوئے آئیں گے ‘۔

’   مگر جھوٹ بولنا بہت بری بات ہے ‘۔   آصف نے کہا جو کہ اپنے شریر کزن کے منصوبے کے بارے  میں زیادہ یقین نہیں رکھتا تھا۔

’  یہ تو صرف مذاق ہے۔  حمزہ نے اصرار کرکے کہا۔  کیا تم ان کے  پریشان چہرے نہیں دیکھنا چاہتے  جب وہ ہمیں بچانےکے لئے بھاگے ہوئے آ ئیں گے ؟  یہ کتنی اچھی دل لگی ہوگی‘۔

’  اور جب ان کو یہ معلوم ہوگا کہ یہاں کوئی بھیڑیا نہیں ہے، اور پھر ہمیں ان پر ہنستے ہوئے دیکھیں گےتو وہ ہم سے سخت ناراض ہو جائیں گے ‘۔ آصف نے کہا ۔ لیکن یہ کہتے ہوئے بھی آصف کو اعتراف کرنا پڑا ، کہ جیسے ہی گاؤں کے لوگ چراگاہ میں بھاگے ہوئے آئیں گے ان کے چہروں پر پریشانی کے آثار دیکھنا واقعی بہت ہی مذاقیہ بات ہو گی۔ اسے یہ بھی اعتراف کرنا پڑا  کہ بکریوں کو تمام دن گھاس چرتے دیکھنا بھی بہت ہی  بور کرتا ہے۔

’  اچھا ‘   اس نے آخر کار کہا ،   ’ہم یہ سب کچھ کس طرح کریں گے ؟‘

پھرحمزہ نے اپنا منصوبہ بیان کیا، اور دونوں لڑکے گاؤں کے بے اندیشہ لوگوں کا خیال کرکے خود بخود ہنستے ہوئے اپنے ہاتھ خوشی سے ملنے لگے۔

دوسرے دن بکریوں کا دودھ دوہنے کے بعد دونوں لڑکے بکریوں کے گلےّ کو  چراگاہ میں چرانے لے گئے۔ پھر اپنا مزیدار  کھانا کھانے کے بعدجو کہ آصف کی والدہ نے اچھی طرح باندھ کر دیا تھا ، انہوں نے اپنا شرارتی منصوبہ  پورا کرنے کا فیصلہ کیا۔

حمزہ ایک پہاڑی کے پیچھے چھپ گیا جب کہ آصف  گاؤں کی طرف بہت اونچی آواز میں  شور کرتا ہوا بھاگا ۔’  بچاؤ  !  بچاؤ  !  بھیڑیا حمزہ پر حملہ کر رہا ہے ۔۔۔ہم پر مہربا نی کیجئے۔۔۔ہماری مدد کیجئے ۔۔۔بچایئے !   بچایئے  !‘

جیسے ہی گاؤں کے لوگوں نےآصف کی چیخ  و پکار سنی، انہوں نے ڈنڈے اور کلہاڑیاں اٹھائیں اور چراگاہ کی طرف بھاگے۔ ’بھیڑیا کہاں ہے ؟‘  ایک آدمی نے پوچھا۔ ’اس نے حمزہ پر کیسے حملہ کیا ؟‘     دوسرے نے پوچھا۔   ’ کیا بھڑیا اسے گھسیٹ کر لے گیا ہے ،   جیسا کہ اس نےمیری بکریوں اور مرغیوں کے ساتھ کیا تھا  ؟  ہمیں بتاؤ حمزہ کہاں ہے  ؟ ‘ ۔

گاؤں والے ہر طرف تلاش کرنے کے بعد  زخمی لڑکے کو نہ پا کر بہت  زیادہ پریشان ہو گئے ۔

عین اس وقت حمزہ اپنی چھپنے کی جگہ میں سے کود کر باہر آ    گیا۔  ’    خوش آ مدید    !  یہاں آ نے کا شکریہ‘  ۔ نڈر لڑکے نے دانت نکال کر اپنے چہرے پرہنسی لاتے ہوئے کہا ۔’  مگر یہاں پر تو کوئی بھیڑیا نہیں ہے۔ جب میں نے اس کو بتایا کہ گاؤں والے  اسے مارنے آ  رہے ہیں تو وہ ڈر کر  بھاگ گیا ‘ ۔ پھر حمزہ ہنستے ہنستے لوٹ پوٹ ہو کر زمیں پر گر گیا۔ جب آصف نے گاؤں والوں کے چہروں پر پریشانی اور گھبراہٹ کے آ ثار دیکھے تو  وہ بھی ہنستے ہنستے گھاس پر گر کر لوٹ پوٹ ہونے لگا۔ گاؤں والے لڑکوں کے ساتھ سخت ناراض ہوئے۔ اور جب وہ چراگاہ سے واپس جا رہے تھے انہوں نے عہد کیا کہ وہ آصف کے باپ کو اس کے بیٹے کی اس خبیث حرکت کے بارے میں بتائیں گے۔ جب احمد کو  اس بات کا علم ہوا جو کچھ کہ  اس کے بیٹے نے کیا تھا ،تو وہ واقعی سخت نا امید ہوا۔وہ دونو ں لڑکوں کو گھسیٹ کر گاؤں والوں کےہجوم کے سامنے لے آ یا اور  دونوں سے ان کی اس پوشیدہ شرارتی حرکت کے لئے گاؤں والوں سے معافی منگوائی، اورعہد لیا کہ آ ئیندہ کبھی بھی وہ اس قسم کی  حرکت نہیں کریں گے۔

کچھ مہینے گذر گئے اور زندگی دوبارہ معمول کے مطابق گزرنے لگی۔ لیکن  پھر ایک دن جب حمزہ اور آ صف چراگاہ میں بکریاں چرا رہے تھے تو ایک خوفناک بھیڑیا  ایک پہاڑی کے پیچھے سے آ نکلا، اور اس نے ایک بکری کو گھسیٹ کر لے جانے کی کوشش کی۔ حمزہ فوراً  کھڑا  ہو گیا اور بھیڑیے کو  ڈرانے کے لئے اس کے پیچھے بھا گا، لیکن خوفناک بھیڑیے نے بکری کو تو چھوڑ دیا اور اس کے بدلے حمزہ کی ٹانگ کو منہ میں پکڑ لیا۔آصف اپنے دوست کو  بھیڑیے کےگھسیٹ کر لے جاتے ہوئے دیکھ کر بہت خوف زدہ ہو گیا ، اور فوراً گاؤں کی طرف چیختا ہوا بھاگا۔ ’ گاؤں کے مہربان لوگو ، مہربانی سے جلدی آیئے،  بھیڑیا حمزہ کو گھسیٹ کر لے جا رہا ہے۔۔۔اسے بچایئے۔۔۔ مہربانی کیجئے۔۔ ہماری مدد کیجئے۔۔۔بچایئے  !   بچایئے !‘

گاؤں والوں میں سے ایک نے کہا۔’ ہم دوبارہ الوّ نہیں بنیں گے۔ جاؤ اپنی بکریوں کے پاس ‘ ۔

’ مہربانی کیجئے ‘۔۔۔آصف رویا۔’  میں سچ کہ رہا ہوں،  حمزہ کو بچایئے ،اس سے پہلے کہ بہت دیر ہو جائے!‘

ایک مہربان  آ دمی نے چراگاہ کے آس پاس جا کر دیکھنے کا فیصلہ کیا، اور اس نے وہاں سے حمزہ کو دیکھا کہ اس کی ٹانگ بھیڑیے کے مظبوط   جبڑوں  میں پھنسی ہوئی تھی۔ ’  آصف سچ کہ رہا ہے‘ ۔  وہ چلاّیا  ،  ’ جلدی آیئے ، اور فوراً مدد  کیجئے  ‘۔

گاؤں والوں نے اپنی لاٹھیاں اور کلہاڑیاں سنمبھالیں اور بیچارے حمزہ کی مدد کو دوڑے ۔ اور جب بھیڑیئے نے لوگوں کے اس بڑے ہجوم  کو اپنی طرف بھاگتے ہوئے دیکھا تو اس نےلڑکے کی ٹانگ کو چھوڑ دیا اور جنگل کی طرف غائب ہو گیا۔

دو لوگوں نے حمزہ کو اس کے کندھوں سے پکڑ کر اٹھایا اور اسے لے کر گاؤں واپس آئے۔ لڑکے کی ٹانگ بری طرح زخمی ہو گئی تھی ، اور وہ بہت درد محسوس کر رہا تھا،   آصف کی آ نکھوں میں آ  نسو  تھے۔ اس نے گاؤں والوں سے پوچھا  ’  آپ لوگ جلدی مدد کے لئے کیوں نہ آئے ؟ ‘۔   ’آپ نے میرا یقین کیوں نہیں کیا تھا  ؟‘

ایک عورت آ گے بڑھی ’  تم نے ہم سے پہلے بھی جھوٹ بولا تھا ‘۔ اس نے سمجھاتے ہوئے کہا  ۔’ اسی وجہ سےہم نے تمہارا یقین نہیں کیا۔  کیا اب تم یہ دیکھ نہیں رہے ہو کہ جھوٹ بولنا  کتنا غلط ہے؟  تمہیں کبھی بھی اس طرح کی حرکت نہیں کرنی چاہیئے کیوں کہ اس سے بے اعتمادی پیدا ہوتی ہے ‘   ۔

آصف نےاپنے زخمی کزن کی طرف دیکھا اور گاؤں والوں کی طرف بھی ،جنہوں نے لڑکے کو بھیڑیے سے بچایا تھا، اور وہ سمجھ گیاکہ اب وہ پھر کبھی بھی جھوٹ نہیں بولے گا۔

Other Urdu Stories

Basant Festival

Basant Festival

Language: English/Urdu  Origin: Pakistan

Amir and Zeba were a brother and sister who lived in Lahore, the second largest city in Pakistan, often referred to as ‘the cultural capital of Pakistan’...

Enjoy this story in: English Urdu

The Mystery of the Buried Treasure

The Mystery of the Buried Treasure

Language: English/Urdu  Origin: Pakistan

Once upon a time, there was a very hardworking farmer called Rahim who lived in an agricultural village in a fertile province of Pakistan called Punjab.

Enjoy this story in: English Urdu

The Tortoise and the Hare

The Tortoise and the Hare

Language: English/Urdu  Origin: Pakistan

Once upon a time, in the woods in the northern area of Pakistan, there lived many different kinds of animals...

Enjoy this story in: English Urdu

The Washerman's Donkey

The Washerman's Donkey

Language: English/Urdu  Origin: Pakistan

Haroon was a little boy who lived in a small village outside Karachi: the largest city and seaport of Pakistan...

Enjoy this story in: English Urdu

View All

Your World

Please send us stories, pictures, poems and responses. We’ll display your work in our World Stories Gallery. Enter our national writing and art competitions. Win certificates and prizes.